امام حرم مدنی شیخ عبدالرحمن بن علی الحذیفی

مبصرالرحمن القاسمی (کویت)

mubassir2008@yahoo.co.in

شیخ عبدالرحمن بن علی بن احمد الحذیفی کا تعلق قبیلہ عوامر کی شاخ آل حذیفہ سے ہے، عوامر بنی خثعم  کی ایک شاخ ہے، ، آل حذیفہ کو صدیوں سے عوامر قبیلے کی سربراہی کا شرف حاصل ہے، اور آج بھی آل حذیفہ عوامر میں شریف اور سربراہ خاندان سمجھا جاتا ہے۔

شیخ حذیفی کی پیدائش سال 1366ھ میں عوامر علاقے کے قرن مستقیم قصبے میں ایک متدین خاندان میں ہوئی، آپ کے والد سعودی فوج میں امام وخطیب تھے، آپ نے ابتدائی تعلیم علاقے کے مکتب میں حاصل کی، اور قرآن کریم کا ناظرہ، شیخ محمد بن ابراہیم الحذیفی العامری کے پاس مکمل کیا، نیز آپ ہی کے پاس چند پارے حفظ اورعلوم دینیہ کی بعض کتابیں پڑھی۔

سال 1381ھ میں شیخ حذیفی نے سعودی عرب کے علاقے بَلجُرَشِی میں واقع مدرسہ سلفیہ میں داخلہ لیا اور یہاں سے متوسطہ کی تعلیم حاصل کی، پھر بَلجُرَشِی میں ہی واقع تعلیمی ادارہ” معہد علمی” میں داخل ہوئے اور یہاں سے سال 1388ھ میں ثانویہ کی تعلیم مکمل کی۔

اس کے بعد ریاض کے شریعہ کالج میں سال 1388ھ میں داخل ہوئے اور سال 1392ھ میں فارغ ہوئے۔ شریعہ کالج کی تعلیم سے فراغت کے بعد معھد علمی بَلجُرَشِی میں مدرس کی حیثیت سے مقرر ہوئے، جہاں آپ نے تفسیر، توحید، نحو، اور صرف جیسے مضامین کی تدریس سرانجام دیں، اسی کے ساتھ آپ نے علاقہ بَلجُرَشِی کی جامع مسجد میں امام وخطیب کے فرائض سرانجام دیئے۔

سال 1395ھ میں شیخ حذیفی نےعالم اسلام کی مشہور ومعروف اسلامی یونیورسٹی جامعہ ازہر سے ماسٹر کی ڈگری حاصل کی، اور اسی یونیورسٹی کے فقہ اسلامی فیکلٹی سے ڈاکٹریٹ کی ڈگری حاصل کی،

سال 1397ھ میں شیخ حذیفی مدینہ منورہ اسلامک یونیورسٹی میں بحیثیت مدرس مقرر ہوئے، جہاں آپ نے شریعہ فیکلٹی میں توحید اور فقہ کی تعلیم دی، اسی طرح آپ کو حدیث فیکلٹی اور دعوت واصول دین فیکلٹیز میں بھی تدریس کا موقع ملا،اور 1418 ھ میں قرآن کریم کالج کے شعبہ قراءات میں قراءات قرآنی کی تعلیم دی۔
اس اثناء شیخ حذیفی نے یونیورسٹٰی میں تدریس کے فرائض کے ساتھ ساتھ مسجد قباء میں امامت وخطابت کے فرائض بھی انجام دیئے۔

ماہ جمادی الآخر کی 6 تاریخ سال 1399ھ کو شیخ حذیفی مسجد نبوی میں امام وخطیب کی حیثیت سے منتخب ہوئے، اور ماہ رمضان المبارک 1401ھ کو شیخ موصوف کا حرم مکی میں بحیثیت امام انتخاب عمل میں آیا، اور سال 1402ھ میں آپ کو دوبارہ مسجد نبوی میں امام وخطیب مقرر کردیا گیا اور اس تاریخ سے شیخ مستقل مسجد نبوی میں امام وخطیب کے عہدے پر فائز ہیں۔ حرم مدنی میں امامت کے ساتھہ ساتھہ شیخ موصوف مسجد نبوی میں حدیث اور فقہ کا درس بھی دیتے ہیں۔

شیخ حذیفی کو کبار علماء اور قراء سے حدیث شریف اور قرأت قرآن پاک کی  اجازت حاصل ہے جن میں قراءات عشرہ میں شیخ احمد عبدالعزیز الزیات سے ، بروایت حفص اور قراءات سبعہ میں شیخ عامر سید عثمان سے ، بروایت حفص شیخ عبدالفتاح القاضی سے اور حدیث شریف میں شیخ حماد الانصاری، شیخ صالح الفوزان، شیخ فالح بن مھدی الدوسری اور شیخ صالح علی ناصر  سے اجازت حاصل ہے۔

شیخ حذیفی متعدد تعلیمی کمیٹیوں اور اداروں کے سربراہ اور رکن ہیں، آپ مصحف مدنی کی نظرثانی کے لئے تشکیل کردہ علمی کمیٹی کے سربراہ، فہدکامپلکس برائے طباعت قرآن کریم اور ریکارڈنگ کی نگرانی کے لئے تشکیل کردہ کمیٹی کے رکن  اور فہد کامپلکس برائے طباعت قرآن کریم کی ہائی کمیٹی کے بھی رکن ہیں۔

شیخ کی آواز میں فہد کامپلکس برائے طباعت قرآن مجید سے دو مرتبہ کامل قرآن مجید کی ریکارڈنگ کا اہتمام کیا گیا، ایک دفعہ تلاوت بروایت حفص اور ایک مرتبہ طریق شاطبیہ سے بروایت قالون عن نافع  تلاوت کلام مجید کی ریکارڈنگ کا اہتمام کیا گیا۔

شیخ حذیفی نے دنیا بھر میں منعقد ہونے والی مختلف تعلیمی اور دینی کانفرنسوں اور سیمناروں میں شرکت کی۔

شیخ متعدد کتابوں کے مصنف بھی ہیں تاہم یہ کتابیں زیرطباعت ہیں۔

Be the first to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.


*