سنئے ! آپ کا بچہ آپ سے کیا چاہتا ہے ؟

 تحریر و تحقیق: اشتیاق احمد

بچوں کی چاہت،بچوں کی شکایتیں اوربچوںکے جذبات کی عکاسی پرمشتمل تجزیہ کی یہ تیسری قسط پیش خدمت ہے جسے بچوں کی زبانی نقل کیا گیا ہے، تو لیجئے بغور پڑھئے اور بچوںکے تئیں اپنے رویہ پر نظرثانی کیجئے:

  • مجھے عام اخلاقیات کے بارے میں چھوٹی چھوٹی قرآنی آیا ت اور احادیث زبانی یاد کروائیں۔
  • مجھے اجازت لے کر دوسروں کی چیزیں استعمال کرنے کی تربیت دیں۔
  • مجھے جسمانی اور روحانی صفائی کا مفہوم سمجھائیں، کپڑے،جوتے،بستہ اور دیگر اشیاءکو صاف اور ترتیب سے رکھنے میں میری مدد کریں۔نیز مجھے دلائل کے ساتھ بتائیں کہ ماحول کو صاف ستھرا رکھنا کیوں ضروری ہے۔
  • مجھے خواہشات اور ضروریات کے درمیان فرق بتائیں۔آپ کا میری ہر جائزونا جائز خواہش کو پورا کرنا مجھے ضدی اور ہٹ دھرم بنانے کے مترادف ہے۔
  • ہوم ورک اور کھیل کود کیلئے مجھے ایک ٹائم ٹیبل بنا کر دیں۔
  • میرا موازنہ میرے بھائیوں،بہنوں اور کلاس فیلوز سے مت کریں۔ہم سب مختلف ہیں۔اس لیے اپنی توقعات کو ہماری صلاحیتوں سے ہم آہنگ کریں۔
  • اپنی محبت کو تعصب کا شکار نہ ہونے دیں۔میرے بھائیوں اور بہنوں میں اپنی محبت کو برابری کی بنیاد پر تقسیم کریں۔
  • مجھے ٹیوشن کا رسیا نہ بنائیں۔بنے بنائے سوالات اور ان کے جوابات کو رٹا نہ لگانے، نصابی کتب میں سے سوالات کے جوابات خود اخذ کرنے اور ان کو سمجھ کر ذہن نشین کرنے پر میری حوصلہ افزائی کریں۔
  • مجھے فرسودہ،غیر تعمیری،جھوٹی انا اور نمود و نمائش پر مبنی روایات کا خوگر نہ بنائیں
  • میری تخلیق اور تحقیقی صلاحیتوں میں اضافہ کرنے میں میری مدد کریں۔
  • سگریٹ نہ پی کر،فحش فلموں سے پرہیز کر کے۔بیہودہ گانے نہ سن کر اور گالیوں کو اپنی گفتگو سے خارج کر کے میرے لیے اچھی مثال قائم کریں۔
  • مجھے اپنی غلطی تسلیم کر نے کے فوائد اور اپنی ضد پر اڑے رہنے کے نقصانات دلائل کے ساتھ بتائیں۔
  • میرے اساتذہ سے میری تعلیم و تربیت کی بابت ضرور رابطہ رکھیں۔
  • آ پ دونوں میرے سامنے ایک دوسرے کو مورد الزام ٹھہرا کر میری حمایت حاصل کرنے کی کوشش نہ کریں۔
  • میری شرارتیں میری ذہانت کی دلیل ہیں۔ہر وقت ڈانٹ ڈپٹ آپ کیلئے مناسب نہیں ہے۔
  • حضرت حسن ص اور حضرت حسینص اپنے نانا حضرت محمدا کی پشت مبارک پر دوران سجدہ چڑھ کر بیٹھ جاتے مگر ان کے نانا اس وقت تک سجدے سے سر نہ اٹھا تے جب تک وہ خود نہ اتر جاتے۔ کتنا زبردست پیغام ہے آپ کے لیے ؟مجھے ڈانٹ پلاتے اور مجھ پر تنقید کرتے وقت اس پیغام کو ضرور مد نظر رکھیں۔
  • ہمارے رسول صلى الله عليه وسلم نے فرمایا کہ بچے پھول ہیں۔آپ ہی بتائیں پھول کے ساتھ نرمی کے ساتھ پیش آنا چاہیے یا سختی سے۔
  • مجھے تعلیم و تربیت کے ذریعے اچھی ملازمت کے ساتھ ساتھ سچا مسلمان اور اچھا شہری بننے کا ٹارگٹ بھی دیں۔
  • ہمارے پیارے رسول ا تو مٹی میں لتھڑے بچوں کو بھی گود میں اٹھا تے اور پیار کرتے۔مجھ سے نفرت کا اظہار کرنے سے پہلے اپنے ذہن کی سکرین پر آپ ا کا یہ مبارک عمل ضرور لائیں۔
  • میرے لیے کھانے،اور پڑھنے کے اوقات مقرر کریں۔
  •  اگر میرا کسی ساتھی سے جھگڑا ہو جائے تو بلا سوچے سمجھے میری حمایت نہ شروع کر دیں۔
  • میں سو کر اٹھو ںتو مسکرا کر میرا استقبال کریں۔
  • مجھ پر اعتماد کریں اور مجھ پر اعتماد بنائیں۔
  • ہر ماہ چند روپے دیں جنہیں میں اپنے ہاتھ سے اللہ کی راہ میں خرچ کر سکوں۔
  • اپنے ما فی الضمیر کے اظہار کے لیے مجھے مقرر بنائیں اور بات کرنے کا اور سننے کا سلیقہ سکھائیں۔
  • اگر آپ میرے لیے کمپیوٹر خریدیں تو اس کے ذریعے میری تعلیم و تربیت کو بھی یقینی بنائیں۔عرفان کے ابو تمام اہل خانہ کو ایک جگہ بٹھا کر کمپیوٹر کے ذریعے تلاوت قرآن مجید،ترجمہ،تفسیر، اور تجوید سکھاتے ہیں۔ ریاضی،سائنس، انگریزی،جغرافیہ، اور دیگر علوم کی سی ڈیز کے علاوہ ان کے پاس بچوں اور بڑوں کی اخلاقی تربیت کے مختلف اداروں کی بنی ہوئی سی ڈیز موجود ہیں ۔
  • یاد رکھیں !میں آپ کے ذہن کو اچھی طرح نہیں پڑھ سکتا مگر آپ میرے ذہن کو اچھی طرح پڑھ سکتے ہیں۔
  • مجھے تربیت دیں کہ میں ہر نئی چیز خریدنے کی ضد نہ کروں۔
  • کاغذ،پنسل،ربڑ،پیمانہ،کتاب، اور عام استعمال کی اشیاءدوسرے بچوں کو استعمال کے لیے دینے پر میری حوصلہ افزائی کریں۔
  • مجھے بتائیں کہ آپ کی عدم موجودگی میں گھر آنے والے مہمانوں سے کس طرح پیش آوں۔
  • مجھ پر تنقید ذرا آہستہ مگر میری تعریف ذرا بلند اور زور دار الفاظ کے ساتھ کریں۔
  • آپ کا مجھے خوشگوار موڈ کے ساتھ سکول بھیجنا اور واپسی پر اسی طرح استقبال کرنا مجھے دن بھر خوش و خرم رکھتا ہے۔اور میری کارکردگی میں اضافے کا باعث بنتا ہے۔
  • دودھ گرنے،پلیٹ ٹوٹنے اور اس طرح کی دیگر  غیر ارادی غلطیوں پر طعن و تشنیع کے تیر برسانے کی بجائے صبر و تحمل اور برداشت کا مظاہرہ کریں۔
  • مجھے کنویں کا مینڈک نہ بنائیں۔میرے ارد گرد کیا ہے ہے ؟ مجھے بتائیں۔
  • مجھے کھل کر بات کرنے کا موقع دیں میرے جملوں کو درمیان سے کاٹ کر میری دل آزاری نہ کریں۔
  • کنجوس نہ بنیں۔کبھی کبھی اپنی زبان سے بھی کہہ دیا کریں کہ آپ کو مجھ سے محبت ہے اور آپ مجھ پر فخر کرتے ہیں۔
  • مجھے سمجھنے کی کوشش کریں۔غصے میں نہیں ذرا ٹھنڈے دل و دماغ کے ساتھ۔
  • میرے ذریعے گھر کے دیگر افراد کی جاسوسی مت کروائیں۔
  • ایک ہی وقت میں میر ے لیے کئی کئی حکم جاری نہ کریں اور مجھے گوشت پوست کا انسان ہی سمجھیں۔(جاری )

 

Be the first to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.


*