بزم ادب

 

 

گلستاں راہ میں آئے تو

 

تو رازِ کُن فکاں ہے اپنی آنکھوں پر عیاں ہوجا

خودی کا رازداں ہو جا ، خدا کا ترجماں ہوجا

ہوس نے کردیا ہے ٹکڑے ٹکڑے نوعِ انساں کو

اُخوّت کا بیاں ہو جا ، محبّت کی زباں ہوجا

یہ ہندی، وہ خراسانی، یہ افغانی ، وہ تورانی

تو اے شرمندہ ساحل اُچھل کر بیکراں ہوجا

غبار آلودہ رنگ و نسب ہیں بال وپر تیرے

تو اے مُرغِ حرم اڑنے سے پہلے پَر فشاں ہوجا

خودی میں ڈوب جا غافل ! یہ سرّ زندگانی ہے

نکل کر حلقہ شام وسحر سے جاوداں ہوجا

مصاف ِ زندگی میں سیرتِ فولاد پیدا کر

شبستانِ محبت میں حریر و پرنیاں ہوجا

گزر جا بن کے سیلِ تند رو کو ہ و بیاباں سے

گلستاں راہ میں آئے تو جوئے نغمہ خواں ہوجا

(علامہ اقبال)

 

 

اے عشق تو نے اکثر

 

اے عشق تو نے اکثر قوموں کو کھاکے چھوڑا

 

جس گھر سے سر اُٹھایا اس کوبٹھاکے چھوڑا

 

رایوں کے راج چھینے شاہوں کے تاج چھینے

 

گردن کشوں کو اکثرنیچا د کھاکے چھوڑا

 

فرہاد کوہکن کی لی تونے جانِ شیریں

 

اور قیسِ عامری کو مجنوں بنا کے چھوڑا

 

یعقوب سے بشر کو دی تونے ناصبوری

 

یوسف سے پارسا پر بہتاں لگا کے چھوڑا

 

عقل و خرد نے تجھ سے کچھ چپقلش جہاں کی

 

عقل و خرد کا تو نے خاکہ اڑا کے چھوڑا

 

افسانہ تیرا رنگین، روداد تیری دلکش

 

شعر و سخن کا تونے جادو بنا کے چھوڑا

 

اک دسترس سے تیری حالی بچا ہوا تھا

 

اس کے بھی دل پہ آخر چرکا لگا کے چھوڑا

 

(الطاف حسین حالی)

 

 

 

امیدِ سحر کی بات سنو

 

جگر دَریدہ ہوں ،چاک ِ جگر کی بات سنو

 

الم رَسیدہ ہوں ، دامنِ ترکی بات سنو

 

زباں بُریدہ ہوں،زخمِ گلو سے حرف کرو

 

امیدِ سحر کی بات سنو

 

شکستہ پا ہوں ،ملال ِ سفر کی بات سنو

 

مسافرِراہِ صحرائے ظلمتِ شب سے

 

اب التفاتِ نگارِ سحر کی بات سنو

 

امیدِ سحر کی بات سنو

Be the first to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.


*