ipc کے شب وروز

  عیدالفطر کی مناسبت سے نومسلم بھائیوں کے لیے تفریحی پروگرام

سابقہ روایات کے مطابق امسال بھی عید الفطر کی مناسبت سے نومسلم بھائیوں کو عید کی خوشی میں شریک کرنے کے لیے ہرزبان میں الگ الگ پروگرام کا نظم کیا گیا۔ ہندی زبان کے نومسلموں کے لیے کویت کے چڑیا گھرمیں ایک تفریحی پروگرام رکھاگیا تھاجس میں دعاة کے علاوہ ہندی زبان کے 15 نومسلم بھائیوں نے شرکت کی ،جانوروںکی دنیا میں اللہ کی نشانیاںدیکھنے اور ایمان تازہ کرنے کے لیے سارے نومسلم بھائی ایک گھنٹہ تک چڑیا گھر کے مختلف جہات میں گھومتے اور بھانت بھانت کے جانوروں اور پرندوں کا مشاہدہ کرتے رہے۔

اس کے بعد چڑیاگھر کے ایک گوشہ میں حسب ترتیب سبزہ پر تربیتی لکچرز کا نظم کیا گیا۔ مولانا صفات عالم محمد زبیر تیمی صاحب نے نومسلم بھائیوں کو عید سعیدکی مبارکبادپیش کرتے ہوئے فرمایا کہ اسلام دین فطرت ہے جوفطری تقاضوں کو پورا کرنے کو نہ صرف جائز قرار دیتا ہے بلکہ اس کی ہمت افزائی کرتا ہے ،عید کا دن تھا،حضوراکرم صلى الله عليه وسلم  کے گھر ابوبکررضي الله عنه  تشریف لائے ،دیکھا کہ چند بچیاں جنگ بعاث میں صحابہ کرام کی شجاعت ودلیری پرمشتمل اشعارگارہی ہیں ،ابوبکررضي الله عنه  فوراً بول اٹھے: کیارسول اللہ صلى الله عليه وسلم  کے گھر میں شیطان کی بانسری؟ آپ نے فرمایا: ابوبکرہرقوم کی عید ہوتی ہے اور آج ہماری عید ہے ۔

 مولانا اعجازالدین عمری صاحب نے عید کا پیغام پیش کرتے ہوئے فرمایا کہ اسلام نہ رہبانیت اور ترک دنیا کا قائل ہے اور نہ دنیا پرستی کی تعلیم دیتا ہے بلکہ اسلامی تعلیمات اعتدال پسند ،متوازن اور افراط وتفریط سے پاک ہيں،اسلام نے اپنے ماننے والوں کے لیے سال میں دو دن (عیدالفطراور عیدالاضحی )ایسے متعین کیے جن میں مسلمان شرعی دائرے میں رہتے ہوئے خوشی ومسرت کا اظہار کرتے ہیں۔آپ نے فرمایا کہ عید کا تہوار خوشیوں اور مسرتوں کا پیغام لے کر آتا ہے ،عید ہمیں ایثاروقربانی،یتیموں اور بیواوں کی دست گیری ،الفت ومحبت ،اخوت وبھائی چارگی، اور مساوات کی تعلیم دیتی ہے ،عیدصرف گلے مل لینے کا نام نہیں بلکہ آپس میں دلوں کے ملنے کا نام ہے ، عید کا پیغام ہے کہ ہم خود کے لیے نہیں بلکہ دوسروں کے لیے جینا سیکھیں ۔

مولانا کرم اللہ منصور مدنی صاحب نے اسلام کی عظمت اوراسکی آفاقیت پرروشنی ڈالتے ہوئے نومسلم بھائیوں کوخطاب فرمایا کہ اسلام ہمارے پاس سب سے قیمتی سرمایہ ہے جسے ہم نے کویت میں آکر حاصل کیا ہے ،حقیقت یہ ہے کہ کویت سے آپ اربوں روپئے کماکرجائیں لیکن پھربھی وہ اسلام کی نعمت کا متبادل نہیں بن سکتے کیونکہ یہ فانی دنیا کے سامان ہیں جبکہ آپ نے ہمیشہ رہنے والی دنیا کو پہچان لیا ہے ۔ آپ نے فرمایا کہ اسلام ہی ساری انسانیت کا مذہب ہے ،آخرت میں نجات کا دارومدار اسی دین پر منحصر ہے،اس لیے ہم سب اسلام کو اپنی عملی زندگی میں جگہ دیں ،اسے سیکھنے کی کوشش کریں اور اپنے رشتے داراورخاندان کو اسکی طرف دعوت دیں ۔

پروگرام کے اخیر میںچند نومسلم بھائیوں نے یکے بعد دیگرے اپنے تاثرات پیش کیے اوراپنی اسلام سے ما قبل اورمابعد کی زندگی پرروشنی ڈالی جس سے حاضرین کا ایمان تازہ ہوا ۔اس طرح یہ ایمان افروز تفریحی پروگرام تقریباًرات کے ۸ بجے عشائیہ پراختتام پذیرہوا ۔ 

 

حفظ قرآن کے نویں انعامی مقابلہ کے انعام یافتگان

ipcکے زیراہتمام حفظ قرآن کے نویں انعامی مقابلہ میں پوزیشن حاصل کرنے والوں کے کے نام مع گروپ اور زمرہ ذیل میں درج کیے جارہے ہیں ، پہلی دوسری اور تیسری پوزیشن نام کی ترتیب کے اعتبار سے ہوگی ۔

پہلا گروپ : 15 سال سے کم عمر والوں کے لیے

زمرہ اول:(ایک پارہ ) احمد عبداللہ ندیم ، شیخ بلال ، جاسم عبداللطیف جابر

زمرہ دوم:(آدھا پارہ ) شیخ عمرفیروز عبدالرحمن ،عبدالوہاب سالم امیرول ، عبداللہ حریص محمد

زمرہ سوم:(13سورتیں) شیخ حذیفہ فیروز عبدالرحمن ، حذیفہ بورا حسینیاہ ، محمد سالہان محمد نصری ۔

دوسرا گروپ : نومسلموں کے لیے

زمرہ اول:کسی نے شرکت نہیں کی

زمرہ دوم:(20سورتیں ) شینییان (عبدالرحمن ) ،ارول مورو غان (سلیم ) ،راتنا یاکا ( عبداللہ ) ۔

زمرہ سوم:(12سورتیں) سوبر امانییان (احمدعمرحسن ) ، رامیل (محمد اید ) ،لومار اسینج ہالجامااراوی ۔

زمرہ چہارم : (7سورتیں) کوندورو سانکار اجو (عبدالرزاق ) جوناتان برحا(عبداللہ ) مانویل ماکندو (عیسیٰ) ۔

تیسرا گروپ : غیرعرب مسلمانوں کے لیے

زمرہ اول:(۳ پارے ) حفیظ فرید احمد، محمدعمرفاروق حافظ ، اسد الرحمن فضل الرحمن ۔

زمرہ دوم:(۲ پارے ) عبداللہ عارف جاوید ،حفیظ علاءالدین اسماعیل ، محمد عمر شہزاد ۔

زمرہ سوم: (ایک پارہ ) زارک خان عرفان الرحمن ، خالد حافظ محمد شعیب ، بابر انعام الحق ۔

 زمرہ چہارم :(آدھا پارہ ) فواز یاسین محمد ،خالد عادل شاہ محمد اخلاص ، ہارون الرشید

 

Be the first to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.


*