آوازِ غیب

 آتی ہے دمِ صبح صدا عرشِ بریں سے

کھویا گیا کس طرح ترا جوہرِ ادراک!

کس طرح ہوا کند ترا نشترِ تحقیق

ہوتے نہیں کیوں تجھ سے ستاروں کے جگر چاک

تو ظاہر و باطن کی خلافت کا سزاوار

کیا شعلہ بھی ہوتا ہے غلامِ خس و خاشاک

مہر و مہ و انجم نہیں محکوم ترے کیوں

کیوں تیری نگاہوں سے لرزتے نہیں افلاک

اب تک ہے رواں گرچہ لہو تیری رگوں میں

نے گرمی  افکار، نہ اندیشہ بے باک

روشن تو وہ ہوتی ہے ، جہاں بیں نہیں ہوتی

جس آنکھ کے پردوں میں نہیں ہے نگہ پاک

باقی نہ رہی تیری وہ آئینہ ضمیری

اے کشتہ  سلطانی و ملّائی و پیری

(علامہ اقبال)

Be the first to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.


*