بچوں سے باتیں

بچو! کہتے ہیں کسی نے لقمان حکیم سے پوچھا: آپ نے ادب کس سے سیکھا ؟
جواب ملا: بے ادبوں سے
اس نے پوچھا: کس طرح
آپ نے فرمایا : انہوں نے جو بُری حرکت کی میں نے اس سے پرہیز کیا ۔
کتنی اچھی بات ہے ….سچ ہے جو مہذب نہیں ہوتے ‘جن میں ادب نہیں ہوتا ،جن میں اخلاق نہیں ہوتے‘ ان کی عادتیں دیکھ کر ہم ان باتوں اور عادتوں سے پرہیز کر سکتے ہیں ۔ ان عادتوں سے بچتے ہیں ، کیوںکہ یہ عادتیں ایسی ہیں کہ ان سے سوائے نقصان کے اور کچھ حاصل نہیں ہوتا ۔ جب ہم کسی کو بحث کرتے ہوئے دیکھتے ہیں تو اگر وہ بحث مناسب ہو توبہتر ہے ورنہ یہی بحث آگے چل کر لڑائی کی شکل اختیار کرلیتی ہے ، دلوں میں رنجش آجاتی ہے، رشتے ناطے ختم ہوجاتے ہیں۔ اس لیے ضروری نہیں ہے کہ کوئی ہمیں ان باتوں کی طرف دھیان دلوائے ،کیوںکہ جب ہم دوسروں کو بات کرتے ہوئے دیکھتے ہیں ، دوسروں کا رویہ دیکھتے ہیں تو سمجھ جاتے ہیں کہ وہ شخصیت کیسی ہے ۔ اسی لیے دوسروں کی غلط باتوں سے سبق سیکھنا چاہیے اور ان سے خود کو بچانا چاہیے۔

Be the first to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.


*