طلوع اسلام

دليل صبح روشن ہے ستاروں کي تنک تابي
افق سے آفتاب ابھرا ،گيا دور گراں خوابي
عروق مردئہ مشرق ميں خون زندگي دوڑا
سمجھ سکتے نہيں اس راز کو سينا و فارابي
مسلماں کو مسلماں کر ديا طوفان مغرب نے
تلاطم ہائے دريا ہي سے ہے گوہر کي سيرابي
عطا مومن کو پھر درگاہ حق سے ہونے والا ہے
شکوہ ترکماني، ذہن ہندي، نطق اعرابي
اثر کچھ خواب کا غنچوں ميں باقي ہے تو اے بلبل
”نوا را تلخ تر مي زن چو ذوق نغمہ کم يابي”
تڑپ صحن چمن ميں، آشياں ميں ، شاخساروں ميں
جدا پارے سے ہو سکتي نہيں تقدير سيمابي
وہ چشم پاک بيں کيوں زينت برگستواں ديکھے
نظر آتي ہے جس کو مرد غازي کي جگر تابي

ضمير لالہ ميں روشن چراغ آرزو کر دے
چمن کے ذرے ذرے کو شہيد جستجو کر دےسرشک چشم مسلم ميں ہے نيساں کا اثر پيدا
خليل اللہ کے دريا ميں ہوں گے پھر گہر پيدا
کتاب ملت بيضا کي پھر شيرازہ بندي ہے
يہ شاخ ہاشمي کرنے کو ہے پھر برگ و بر پيدا
ربود آں ترک شيرازي دل تبريز و کابل را
صبا کرتي ہے بوئے گل سے اپنا ہم سفر پيدا
اگر عثمانيوں پر کوہ غم ٹوٹا تو کيا غم ہے
کہ خون صد ہزار انجم سے ہوتي ہے سحر پيدا
جہاں باني سے ہے دشوار تر کار جہاں بيني
جگر خوں ہو تو چشم دل ميں ہوتي ہے نظر پيدا
ہزاروں سال نرگس اپني بے نوري پہ روتي ہے
بڑي مشکل سے ہوتا ہے چمن ميں ديدہ ور پيدا
نوا پيرا ہو اے بلبل کہ ہو تيرے ترنم سے
کبوتر کے تن نازک ميں شاہيں کا جگر پيدا

 (علامه اقبال)

2 Comments

Leave a Reply

Your email address will not be published.


*